’اخلاقیات کی فکر ہے تو اب چیئرمین سینیٹ کے الیکشن کے لیے اوپن بیلٹ کروالیں‘ وزیراطلاعات سے سوال پوچھا گیا تو جواب کیا ملا؟ جان کر پاکستانی چکرا جائیں گے

’اخلاقیات کی فکر ہے تو اب چیئرمین سینیٹ کے الیکشن کے لیے اوپن بیلٹ کروالیں‘ وزیراطلاعات سے سوال پوچھا گیا تو جواب کیا ملا؟ جان کر پاکستانی چکرا جائیں گے

By

اسلام آباد:  وفاقی وزیر اطلاعات  شبلی فراز نے واضح کیاہے کہ اپوزیشن کی چوائس کے  حساب سے الیکشن اوپن یا سیکرٹ نہیں ہوسکتا۔ وہ  جیونیوز کے پروگرام میں اینکر شہزاد اقبال کے سوال ’اخلاقیات کی فکر  ہے تو اب چیئرمین سینیٹ  کے الیکشن کے لیے  اوپن بیلٹ کروالیں‘؟  کا جواب دے رہے تھے۔

شبلی فراز نے کہا کہ   ہم سیاست میں اخلاقیات لانا چاہتے ہیں اسی لیے  عدالت میں بھی گئے۔ ہم ہار گئے تھے تو  وہ  الیکشن  ٹھیک تھا اور اعتماد کا ووٹ غلط ہوگیا  کیونکہ وہ ہم جیت گئے ہیں۔ چیئرمین سینٹ کے الیکشن میں جیت   کا دعویٰ ابھی ہم نے نہیں کیا،ابھی بچہ پیدا نہیں ہوا اور آپ اسے سکول  میں داخل  کروانے کا کہہ رہے ہیں ۔

انکا کہنا تھا کہ  صادق سنجرانی ہر کسی کے پاس ووٹ مانگنے جارہے ہیں۔ سینیٹ کے الیکشن میں اربوں روپے لگے۔ تب ایجنسیاں کچھ نہیں کرسکیں مگر اعتماد کے ووٹ  میں ان کو ایجنسیاں یاد آگئیں۔شبلی فراز نے شہزاد اقبال کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ  آپ کی مرضی کا جواب آپ کو نہیں دوں گا۔ صادق سنجرانی اپنی کمپین چلارہے ہیں، ہم چاہتے ہیں کہ وہ جیتیں۔

شبلی فراز کا کہنا تھا کہ ہمیں کوئی اخلاقیات نہ سکھائے ہم نے اپنے 20 اراکین کو نکالا تھا۔ہماری حکومت تب بھی تھوڑے ووٹوں سے تھی ہم نے تب بھی لوگ نکالے اب بھی ایکشن لیں گے۔

You may also like