پی ڈی ایم کا لانگ مارچ کب ہو گا ؟اعلان ہو گیا

پی ڈی ایم کا لانگ مارچ کب ہو گا ؟اعلان ہو گیا

By

اسلام آباد: پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے مرکزی  ترجمان میاں افتخارحسین نے کہا ہے کہ پی ڈی ایم کا لانگ مارچ جنوری کے آخری ہفتے میں ہوگا،تاجر،ڈاکٹرز،وکلاء،کسانوں سمیت تمام مکاتب فکر کے لوگوں کو تحریک کا حصہ بنایا جائے گا ،حکمران اتنا ڈر گئے ہیں اب جلسہ لازمی ہوگیا ہے،لاہور جلسے میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا،حکومت مذاکرات کیلئے رابطے کر رہی ہے، پہلے کہتے تھے کرپٹ لوگوں کے ساتھ نہیں بیٹھوں گا اب مذاکرات کیلئے آرہے ہیں، دھاندلی سے آنے والی حکومت کو پہلے مانا ہے نہ اب مانیں گے،ملک میں آئین کی بالادستی چاہتے ہیں،استعفے دیے تو یہ حکومت نہیں چل سکے گی۔

نجی ٹی وی کے مطابق اپوزیشن رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا کو بریفنگ  دیتے ہوئے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے ترجمان میاں افتخار حسین نے کہا   کہ پی ڈی ایم کا لانگ مارچ جنوری کے آخری ہفتے میں ہوگا،تاجر،ڈاکٹرز،وکلاء،کسانوں سمیت تمام مکاتب فکر کے لوگوں کو تحریک کا حصہ بنایا جائے گا،13دسمبر کو ہونے والے جلسے میں رکاوٹیں ڈالی جارہی ہیں،جلسہ گاہ کو تالاب بنادیا گیا ہے،جلسہ رکوانے کیلئے گرفتاریاں شروع کردی گئی ہیں،ڈی جے بٹ کو بھی گرفتار کیا گیا ہے،حکومت خوفزدہ ہو کر ایسی باتیں کر رہی ہے،حکومتی ہتھکنڈوں کا مقابلہ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ ہماری تمام تر توجہ لاہور جلسے پر مرکوز ہے،حکمران اتنا ڈر گئے ہیں اب جلسہ لازمی ہوگیا ہے،ہمارا شیڈول طے ہوچکا ہے،لاہور جلسے میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا۔

میاں افتخارحسین نے کہا کہ حکومت مذاکرات کیلئے رابطے کر رہی ہے، پہلے کہتے تھے کرپٹ لوگوں کے ساتھ نہیں بیٹھوں گا اب مذاکرات کیلئے آرہے ہیں، دھاندلی سے آنے والی حکومت کو پہلے مانا ہے نہ اب مانیں گے، ملک میں آئین کی بالادستی چاہتے ہیں،استعفے دیے تو یہ حکومت نہیں چل سکے گی، پیپلزپارٹی کی سی ای سی کا فیصلہ اعتزاز احسن کو بھی قبول کرنا ہوگا۔ میاں افتخار نے کہاکہ ہمیں الگ الگ تھریٹ ملی ہوئی ہیں،یہ الرٹ خود جاری کرتے ہیں۔

You may also like