القاعدہ کا نائب امیر اور اس کی بیٹی مارے گئے، کس چیز کی منصوبہ بندی کررہے تھے؟ حیران کن خبر آگئی

القاعدہ کا نائب امیر اور اس کی بیٹی مارے گئے، کس چیز کی منصوبہ بندی کررہے تھے؟ حیران کن خبر آگئی

By

نیویارک: امریکی میڈیا نے القاعدہ کے دوسرے بڑے لیڈر عبداللہ احمد عبداللہ المعروف ابو محمد المصری کی ایران میں ہلاکت کا دعویٰ کر دیا۔ میل آن لائن کے مطابق امریکی میڈیا نے اپنی رپورٹس میں بتایا ہے کہ ابو محمد المصری کو ایران میں اسرائیلی ایجنٹس نے گولیاں مار کر قتل کیا۔ابو محمد المصری کا سراغ امریکی خفیہ ایجنسی نے لگایا تھا جس نے معلومات اسرائیلی ایجنٹس کو دیں جنہوں نے ابومحمد المصری کو نشانہ بنایا۔ امریکی فیڈرل حکام نے المصری کو پکڑنے میں مددگار معلومات دینے والے شخص کے لیے 1کروڑ ڈالر کا انعام کا اعلان بھی کر رکھا تھا۔

اگرکورونا کیسز بڑھے تو سکولوں کو سردیوں کی چھٹیا ں کب سے دی جائیں گی? وزیراعظم نے اعلان کردیا
امریکی میڈیا نے انٹیلی جنس ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ القاعدہ کے دوسرے بڑے لیڈر المصری کو رواں سال اگست کے مہینے میں تہران میں ایک سڑک پر گولیاں ماری گئیں۔ انہیں 2اسرائیلی ایجنٹوں نے گولیاں ماریں جو موٹرسائیکل پر سوار تھے۔ اس واقعے میں ابومحمد المصری کے ساتھ اس کی 27سالہ بیوہ بیٹی مریم بھی جاں بحق ہو گئی تھی جس کے متعلق امریکی حکام کا کہنا ہے کہ اسے بھی اس کا والد شدت پسند تنظیم کو چلانے کی تربیت دے رہا تھا اور دونوں دہشت گردی کی نئی وارداتوں کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔مریم القاعدہ کے لیڈر اسامہ بن لادن کے بیٹے حمزہ بن لادن کی اہلیہ تھی۔حمزہ بن لادن کو افغانستان میں 14ستمبر 2019ءکو امریکی فوج نے قتل کر دیا تھا۔ ابو محمد المصری پر 1998ءمیں افریقی ملک تنزانیہ اور کینیا میں 2امریکی سفارت خانوں پر حملوں کی منصوبہ بندی کرنے کا الزام تھا جن میں 224افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

You may also like